site
stats
صحت

ہائی بلڈ پریشر کا عالمی دن

دنیا بھر میں آج ہائپر ٹینشن کا عالمی دن منایا جارہا ہے۔ ہائپر ٹینشن ایسے ہائی بلڈ پریشر کو کہا جاتا ہے جو عموماً ہر وقت جسم کو اپنا نشانہ بنائے رکھے۔

چند روز قبل کی گئی ایک تحقیق کے مطابق پاکستان کی 52 فیصد آبادی بلند فشار خون یعنی ہائی بلڈ پریشر کا شکار ہے۔

دراصل خون کے بہاؤ یا بلڈ پریشر کو معمول کی سطح پر رکھنا دل کا کام ہے جسے وہ 24 گھنٹے پمپ کرتا ہے۔ اگر خون کا بہاؤ بہت زیادہ یا تیز ہوگا تو اس سے دل پر بھی دباؤ پڑتا ہے اور دل کی شریانوں اور نالیوں کو نقصان پہنچنے کا خدشہ ہوتا ہے۔

علاوہ ازیں ہائی بلڈ پریشر اچانک دل کے دورے، فالج کے حملے یا دماغ کی شریان پھٹنے کا سبب بھی بن سکتا ہے۔

ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں کو کیا کرنا چاہیئے؟

اگر آپ یا آپ کا کوئی عزیز ہائی بلڈ پریشر کا مریض ہے تو ضروری ہے کہ وہ احتیاطی تدابیر اپنائے۔

یہاں ہم آپ کو ایسی ہی کچھ تدابیر بتارہے ہیں جنہیں اپنا کر بلڈ پریشر کو معول کی سطح پر رکھا جاسکتا ہے اور اسے جان لیوا صورت اختیار کرنے سے بچایا جاسکتا ہے۔

تمباکو نوشی سے پرہیز

1

سگریٹ میں شامل تمباکو فشار خون کو تیز کرتا ہے جبکہ دوسری جانب یہ دل کی شریانوں کو بھی تنگ کر دیتا ہے جس سے معمول کا بلڈ پریشر بھی ہائی ہونے لگتا ہے۔

ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں کا مستقل تمباکو نوشی کرنا دل کے جان لیوا دورے کا سبب بن سکتا ہے۔

چکنائی سے گریز

3

ویسے تو چکنائی سے بھرے ہوئے مختلف کھانوں کا بہت زیادہ استعمال ہر شخص کے لیے نقصا ن دہ ہے، تاہم ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں کو اس سے مکمل پرہیز کرنا چاہیئے۔

کھانوں میں شامل کی جانے والی چکنائی خون کی نالیوں کو تنگ کردیتی ہے جس سے خون کے بہاؤ میں رکاوٹ پیدا ہوتی ہے اور پمپنگ کے دوران دل کو زیادہ محنت کرنی پڑتی ہے۔

نمک کا کم استعمال

4

نمک کا بہت زیادہ استعمال خون میں سوڈیم کی مقدار کو بڑھا دیتا ہے جس کے بعد بعض اوقات خون میں سوڈیم کے لوتھڑے بھی بن جاتے ہیں۔

یہ سوڈیم جسم کی مختلف نالیوں کو متاثر کرتا ہے جس سے خون کے بہاؤ اور جسم سے مائع کا اخراج کرنے کے دوران مشکل پیدا ہوجاتی ہے۔

سوڈیم ہمارے گردوں کی کارکردگی کو بھی متاثر کرتا ہے۔

ورزش کریں

5

غیر فعال رہنا اور ورزش نہ کرنا جسم میں کولیسٹرل اور چربی کی مقدار میں اضافہ کرتا ہے جس کے بعد جسم کے مختلف اعضا کی کارکردگی کم ہو جاتی ہے۔

چربی کی زیادتی کے باعث نظام ہاضمہ، اخراج اور خون کے بہاؤ کو معمول کے مطابق جاری رہنے کے لیے اعضا کو زیادہ محنت کرنی پڑتی ہے اور وہ دباؤ کا شکار ہوجاتے ہیں۔

کافی کا کم استعمال

6

ویسے تو کافی جسم کے لیے بے حد فائدہ مند ہے مگر اس کا ایک فائدہ یعنی خون کے بہاؤ میں اضافہ ان افراد کے لیے نقصان دہ ہوسکتا ہے جو پہلے ہی بلند فشار خون کا شکار ہوں۔

ذہنی دباؤ سے بچیں

7

ذہنی دباؤ، دماغی تناؤ، اور غصہ وہ عوامل ہیں جو دل کے دھڑکنے کی رفتار اور خون کے بہاؤ کو اچانک تیز کردیتے ہیں جو اچانک دل کے دورے یا فالج کے حملے کی شکل میں ظاہر ہوسکتا ہے۔

خصوصاً ہائی بلڈ پریشر کا شکار افراد کو غصہ اور ذہنی دباؤ سے گریز کرنا چاہیئے کیونکہ یہ ان کے لیے جان لیوا ثابت ہوسکتا ہے۔

باقاعدگی سے چیک اپ کروائیں

8

ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں کو باقاعدگی سے ڈاکٹر کے پاس جا کر اپنا معائنہ کروانا ضروری ہے تاکہ کسی بھی پیچیدگی کی صورت میں فوراً اس کا سدباب کیا جاسکے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly
Please follow and like us:

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ [email protected] اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top