site
stats
انٹرٹینمںٹ

کرینہ کپورکے بیٹے کی ہم شکل بچی منظر عام پر

ممبئی : پٹودی خاندان کا چھوٹے نواب اور بالی ووڈ کے جوڑے کرینہ کپور اور سیف علی خان کا بیٹا تییمور علی خان خود کسی مشہور شخصیت سے کم نہیں ہے، خوبصورت آنکھوں،سنہرے بال اور بے تحاشا معصومت کے باعث تیمور کا ہر کوئی دیوانہ ہے۔

کرینہ کپور کے بیٹا تیمور علی خان ویسے ہی سوشل میڈیا پر کافی مقبول ہے  لیکن ان ایک جھلک ، ایک ہنسی ہہاں تک کے صرف نام ہی میڈیا کی زینت بننے کیلئے کافی ہوتا ہے۔

چند روز قبل سیف علی خان کا ایک انٹرویو میں کہنا تھا کہ انکا بیٹا تیمور علی خان اپنے دادا رندیہر کپور کی طرح نظر آتا ہے لیکن تیمور کے مداحوں کیلیے ایک حیران کر دینے والی خبر ہے۔

کرینہ کے بیٹے تیمور علی خان کا ہم شکل منظر عام پر آگیا اور وہ کوئی لڑکا نہیں بلکہ ایک لڑکی ہے ، جسکا نام عنایا ہے اور متحدہ عرب امارات میں رہتی ہے۔

عنایا اور تیمور نامی ایک انسٹا گرام صارف نے دعوی کیا ہے کہ ایک بچی جسکا نام عنایا ہے ، تیمور سے بہت مشابہت رکھتی ہے اور یہ دعوی بے بنیاد نہیں اصل میں بچی تیمور کی طرح ہی نظر آتی ہیں۔

انسٹاگرام اکاؤنٹ عنایا اور تیمور کی تصاویر سے بھرا پڑا ہے، دونوں کے نقوش ایک دوسرے سے اتنے ملتے ہیں وہی نیلی آنکھیں اور سنہرے بال یہاں تک کے معصومیت بھی ایک جیسی ہے۔

عنایا کے منظر عام پر آتے ہی سوشل میڈیا پر چھوٹے نواب تیمیور علی خان سے مشابہت کے چرچے ہیں۔

خیال رہے کہ کرینہ کپور اور سیف علی خان کے بیٹے تیمور علی خان کی پیدائش گزشتہ سال دسمبر میں ہوئی تھی جبکہ بچی عنایا 5 دسمبر 2016 کو پیدا ہوئی، دنوں کی عمروں میں 15 دن کا فرق ہے۔

 

 

خیال رہے کہ تیمور کی پیدائش کے بعد تیمور علی خان کی کئی تصاویر سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر شیئر ہوچکی ہے، اداکارہ کے مداح تیمور کی تصویر کو بے حد پسند کرتے ہیں اسی وجہ سے تصاویر میڈیا کی زینت بھی بن جاتی ہیں۔

یاد رہے کہ بالی ووڈ جوڑے کی شادی 2012 میں ہوئی تھی اور گزشتہ برس اُن کے بیٹے کی پیدائش ہوئی جس کا نام مسلمانوں کی مناسبت سے تیمور علی خان رکھا گیا، بیٹے کی پیدائش سے قبل قیاس آرائیاں دیکھنے میں آئی تھیں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2017 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top