site
stats
کتب

ایو 2000 – ایک خوبصورت اور حساس ڈرامہ

Eve 2000

ذرا نم ہو تو یہ مٹی بہت زرخیز ہے ساقی! ملتان سے تعلق رکھنے والے ظہور حسین کا انگریزی ڈرامہ ’ایو 2000‘ اس مصرعے کی تفسیر ہے۔

برصغیر پاک وہند یقیناً ادب پرست سرزمین ہے اور اس کا اظہار اس بات سے ہوتا ہے کہ فنونِ لطیفہ کی ہر صنف کو یہاں خوش آمدید کہا جاتا ہے‘ ڈرامہ نگاری کا فن یہاں انگریزوں کے ساتھ آیا اور ارتقاء کے مراحل طے کرتا رہا یہ تک کہ بات ظہور حسین تک آگئی۔

ظہور حسین بہاالدین ذکریا یونی ورسٹی سے انگریزی ادب میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کرچکے ہیں اور اب وہ سرائیکی لوک کہانیوں میں پی ایچ ڈی جیسا مشکل کام انجام دے رہے ہیں‘ اس سے قبل ان کی انگریزی نظموں کا مجموعہ ’ اے سانگ آف اے لائنڈ برائڈ‘ ( نابینا دلہن کا نغمہ ) شائع ہوچکا ہے۔

ایو 2000


زیر نظر کتاب’ ایو 2000‘ انگریزی ادب میں ان کی ایک اور کاوش ہے‘ یہ ایک سنگل ایکٹ پلے ہیں جس میں موجود کردار حوا کی بیٹی کے ارتقاء‘ اسے میسر معاشرتی حقوق اور پدرسری معاشرے میں اس کی انسانی حیثیت کی نشاندہی کرتے نظر آرہے ہیں۔

پانچ مناظر پر مشتمل یہ ڈرامہ کل چار کردار وں پر مشتمل ہے‘ جن میں شوہر‘ بیوی ‘ ملازم اور ایک بچہ شامل ہیں۔یہ ڈرامہ ایک ہی گھر کی چاردیواری کے اندر شروع ہوکرپروان چڑھتاہے اور ایک انتہائی دلچسپ موڑ پر آکر اختتام پذیر ہوتا ہے۔

مصنف کے مطابق یہ داستاں کسی ایک گھر کی نہیں بلکہ بنتِ حوا کے معاشرےمیں ارتقاء کے تمام تر ادوار کی داستاں ہے‘ جو کہ معاشرےمیں سوشل سائنسز کو سمجھنے والے یا اس پر کام رکھنے والے ہر شخص کو اپنی جانب راغب کرے گا۔

اس کھیل کی کہانی ایسے شادی شدہ جوڑے کے گرد گھومتی ہے جو رشتہ ٔ ازدواج جیسے عمرانی معاہدےمیں عورت کے حقوق کی اہمیت کو سمجھ رہے ہوتے ہیں اور اسے دنیا بھر میں پھیلانے کے خواہش مند ہوتے ہیں۔

قاری کو ابتدا میں لگے گا کہ وہ انجام سے واقف ہے لیکن چوتھے اور پانچویں منظر میں ڈرامے کا ٹوئسٹ قارئین کو حیران کردے گا۔

یہ کتاب پاکستان ادب پبلشر نے شائع کی ہے اور اس میں کل باون صفحات ہیں۔ اس کی قیمت 150 روپیہ ہے۔


اگر آپ نے کوئی کتاب شائع کی ہے اور آپ چاہتے ہیں کہ وہ منظرِ عام پر آئے تو مندرجہ ذیل ای میل ایڈریس پر رابطہ کریں

[email protected]

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2017 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top